Advertisment
Advertisment
فیصل شہزاد چغتائیمضامین

سرائیکی زبان کی تاریخ اور ارتقاء: ایک تفصیلی جائزہ

Advertisment
Advertiesment

سرائیکی زبان کی تاریخ اور ارتقاء: ایک تفصیلی جائزہ

تحریر: فیصل شہزاد چغتائی

تعارف

سرائیکی زبان، جو ملتانی زبان کے نام سے بھی مشہور ہے، پاکستان کے مختلف علاقوں میں بولی جاتی ہے۔ یہ ایک اہم علاقائی زبان ہے جس کی تاریخ چند صدیوں سے بھی زیادہ ہے۔ اس مضمون میں ہم سرائیکی زبان کی تاریخ، ترقی اور ثقافتی اہمیت کے مختلف پہلوؤں پر تفصیلی جائزہ لیں گے۔

پہلے دور

سرائیکی زبان کی جڑیں قدیم حضارت سندھ وادی کی طرف بھی جاتی ہیں جو تقریباً 2500 قبل مسیح میں موجود تھی۔ سرائیکی بولنے والے علاقوں میں مختلف بومی آبادیوں کا گھر تھا جس کی بنا پر اس خطے کی بولیوں کی زبانی متنوعت بڑھ گئی۔ سرائیکی کی زبانی وراثت کو باستانی زبانوں سانسکرت، پراکرت اور اپبھرمش سے جوڑا جا سکتا ہے۔

وسطی دور

وسطی دور میں، سرائیکی بولنے والے علاقوں کو مختلف حکومتوں کا تاثر پڑا، جن میں دہلی سلطنت اور مغلیہ سلطنت شامل ہیں۔ یہ سلطنتیں مقامی کلچر، ادب اور ثقافت کے ترویج میں اہم کردار ادا کرتی رہیں۔ اس دوران کے مشہور صوفی شاعر مثلاً بابا فرید اور شاہ حسین نے سرائیکی زبان اور ادب کے تعلقات کو بہتر کیا۔ ان کے شاعری اور کلام نے سرائیکی کی زبانی اور ادبی روایات کو شکل دی۔

فارسی اور عربی کا اثر

سرائیکی جیسی دیگر زبانوں کو بھی فارسی اور عربی کا اثر پڑا ہے جو تاریخی اور ثقافتی تعاملات کی بنا پر ہوا ہے۔ مغلوں کی درباری زبان فارسی نے سرائیکی زبان میں فارسی الفاظ اور جملوں کی تعداد میں اضافہ کیا۔ اسی طرح، دینی اور روحانی شعبوں سے متعلق عربی الفاظ اور اظہارات نے بھی سرائیکی زبان میں داخل ہونے کا راستہ تلاش کیا۔ یہ زبانی ملاپ سرائیکی کے لغت میں اضافہ کیا اور اس کی ثقافتی گہرائی کو بڑھایا۔

استعماری دور

برطانوی راج کے آغاز کے ساتھ، سرائیکی بولنے والے علاقوں نے برطانوی بھارت کا حصہ بنا۔ برطانوی انتظامیہ نے عموماً اردو اور انگریزی کو فروغ دینے پر توجہ مرکوز کی، جس کی وجہ سے سرائیکی جیسی علاقائی زبانوں کو محدود سرکاری تسلسل حاصل ہوئی۔ پھر بھی، سرائیکی بولنے والوں نے زبان کی حیثیت برقرار رکھی اور مقامی کمیونٹیوں کے اندر اس کی اہمیت کو برقرار رکھا۔

حاضرہ کی ترقی

حالیہ دور میں، پاکستان میں سرائیکی جیسی علاقائی زبانوں کو بحفاظت رکھنے اور ترویج کرنے کے لئے توجہ بڑھ گئی ہے۔ سرائیکی کو ادبی زبان کے طور پر منظم کرنے، تحقیقاتی کاموں اور ثقافتی تقریروں کے ذریعے سرائیکی کی ترویج کی کوششیں کی گئی ہیں۔ سرائیکی زبان اور ادب کی ترویج کے لئے تعلیمی اداروں اور میڈیا پلیٹ فارمس کی بنیاد رکھنے نے زبانی و ثقافتی ورثے کی حفاظت میں اہم کردار ادا کیا ہے۔

ثقافتی اہمیت

سرائیکی زبان اس علاقے میں رہنے والے لوگوں کی ثقافتی شناخت اور ورثے کو اظہار کرنے کے لئے ایک اہم وسیلہ ہے۔ یہ مختلف لوک روایات، زبانی ادب، موسیقی اور پرفارمنگ آرٹس کے متنوع اصولوں کو شامل کرتی ہے۔ سرائیکی شاعری اور صوفی موسیقی کو قومی اور بین الاقوامی سطح پر شناخت حاصل ہوئی ہے، جس نے اس خطے کی ثقافتی روایات کو مزید آب و تاب دیا ہے۔

ختم کرنے کا فیصلہ

سرائیکی زبان کی تاریخ اس بات کا ثبوت ہے کہ ہندوستانی سب کی زبانی اور ثقافتی متنوعت کی بھرپور دلیل ہے۔ قدیم حضارت سندھ وادی سے لے کر موجودہ دور تک، سرائیکی زبان اپنے خصوصی خصوصیات کے ساتھ پائی جاتی ہے۔ حکام اور معاشرتی تنظیموں کی سرگرمیوں کے باوجود، سرائیکی بولنے والے لوگ اپنی زبان کی قدر و قیمت کو قائم رکھتے رہے ہیں۔ سرائیکی زبان اور ادب کا ترویج اور حفاظت ضروری ہے تاکہ یہ زبانی و ثقافتی ورثے مستقبل کی نسلوں تک منتقل ہو سکیں۔

Advertisment
Advertisment

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button

Adblock Detected

مہربانی فرما تے اپنڑیں بروزر توں ایڈبلاک سیٹنگ توں ویب سائٹ ھٹاو تاکہ ویب سائٹ تساں تک مکمل پھج سکے