امریکا دی حمایت حاصل کرݨ پاروں حکومت ، پی ٹی آئی دی کوششاں اچ تیزی

0
50

موجودہ سیاسی بحران دے دوران وی پاکستان تے امریکا دے درمیان تعلق کڈھیں محبت تے کڈھیں نفرت اچ بدلݨ دا سلسلہ جاری ھِ عوامی سطح تے اپوزیشن تے حکمران جماعتاں ڈونہاں دی کوشش کریندی پئی ھِ کہ او امریکا نال تعلق قائم کرݨ پاروں زیادہ بے چین ڈکھائی نہ ویووے لیکن نجی سطح تے ڈونہاں اے تاثر ڈیندے پئے ھن کہ امریکا اساڈے نال ھِ

اخباری رپورٹ دے مطابق امریکا تے خاص طور تے بائیڈن انتظامیہ ڈونہاں (حکومت پاکستان تے اپوزیشن) توں محتاط فاصلہ برقرار رکھیندے ہووے ، محکمہ خارجہ دے عہدیداراں نال جئیں پاکستان دی موجودہ سیاسی صورتحال تے تبصرہ کرݨ پاروں کیتا گئیا تاں انہاں واضح آکھیا کہ او کہیں مخسوص سیاسی جماعت یا رہنما دی کینی جمہوریت تے جمہوری طرز عمل دی حمایت کریندے ھیں۔

انسانی حقوق توں متعلق تازہ امریکی رپورٹ اچ وی اے موقف ظاہر کیتا گئیا ھِ جئیں نال ظاہر تھیندا ھِ کہ امریکا پاکستان دی موجودہ سیاسی صورتحال دا باغور جائزہ گھیندا پئے لیکن ھݨ تک ایندے عمل دخض دی کوئی خواہش نی رکھیندا امریکی اسکالر تے قانون سازاں وی ایں معاملے توں پرے رھاون دا آکھے، تاہم امریکی حکام دے برعکس انہاں پاکستان دی صورتحال کوں تشویشناک قرار ڈیندے ہووے لفظ استعمال کرݨ اچ کوئی احتیاط نی کیتی۔

 

اردو میں خبر ۔۔۔

موجودہ سیاسی بحران کے دوران بھی پاکستان اور امریکا کے درمیان تعلق کبھی محبت اور کبھی نفرت میں بدلنے کا سلسلہ جاری ہے، عوامی سطح پر اپوزیشن اور حکمران جماعتیں دونوں کوشش کر رہی ہیں کہ وہ امریکا سے تعلق قائم کرنے کے لیے زیادہ بےچین دکھائی نہ دیں لیکن نجی سطح پر دونوں یہ تاثر دے رہے ہیں کہ ’امریکا ہمارے ساتھ ہے‘۔

تاہم ڈان اخبار کی رپورٹ کے مطابق امریکا اور خاص طور پر بائیڈن انتظامیہ دونوں (حکومت پاکستان اور اپوزیشن) سے محتاط فاصلہ برقرار رکھے ہوئے ہے، محکمہ خارجہ کے عہدیداروں سے جب پاکستان کی موجودہ سیاسی صورتحال پر تبصرہ کرنے کے لیے کہا گیا تو انہوں نے واضح کیا کہ وہ کسی مخصوص سیاسی جماعت یا رہنما کی نہیں جمہوریت اور جمہوری طرزعمل کی حمایت کرتے ہیں۔

انسانی حقوق سے متعلق تازہ ترین امریکی رپورٹ میں بھی اس مؤقف کا اعادہ کیا گیا ہے، جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ امریکا پاکستان کی موجودہ سیاسی صورتحال کا بغور جائزہ لے رہا ہے لیکن اب تک اس میں عمل دخل کی کوئی خواہش نہیں رکھتا۔

امریکی اسکالرز اور قانون سازوں نے بھی اس تنازع میں فریق بننے سے گریز کیا ہے تاہم امریکی حکام کے برعکس انہوں نے پاکستان کی صورت حال کو تشویشناک قرار دیتے ہوئے الفاظ کے چناؤ میں کوئی محتاط رویہ اختیار نہیں کی۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here