چین اور امریکا کی کرنسی

0
49

تحریر فیصل شہزاد چغتائی

چین اور امریکا دونوں دنیا کے بزنس اور معاملاتی میدان میں اہم ممالک ہیں۔ ان کی قوتیں، رہنمائی کرنے والی اقتصادی نیتیات اور ان کی کرنسی سیاسی اور تجارتی مسائل پر بہت زیادہ اثرانداز ہوتی ہیں۔ چین ایشیاء کی سب سے بڑی معاشی قوت ہے جبکہ امریکہ دنیا کی سب سے بڑی معاشی قوت ہے۔ دونوں ممالک کی کرنسیوں کا تعامل ان کے درمیان تجارت، سرمایہ کاری اور مالیاتی معاہدوں پر منحصر ہوتا ہے۔ اس مضمون میں ہم چین اور امریکا کی کرنسیوں کی تاریخ، اہمیت، تبادلہ کاروبار، تجارتی رشتے اور دونوں کی کرنسیوں کے بیچ تعاملات پر غور کریں گے۔

چین کی کرنسی یوآن (CNY) یا رینمنبی ہے۔ یوآن چین کی مرکزی بینک، یعنی چینی مرکزی بینک کی طرف سے جاری کی جاتی ہے۔ چینی یوآن کی تاریخ قدیم ہے۔ اس کا استعمال چین کی تجارتی تاریخ میں قدیم دوروں سے شروع ہوا ہے۔ یوآن کی اہمیت میں چین کی مضبوط معاشی مستحکمی، گھریلو اور بین الاقوامی تجارت کا سرعام اور چینی سرمایہ کاری کی بڑی وجہ ہے۔ چین کی مستقبل کی نظر میں بھی یوآن اہمیت کے حامل ہے۔

امریکا کی کرنسی دالر (USD) ہے۔ دالر دنیا کا سب سے مقبول اور اہم کرنسی ہے۔ امریکا کی معاشی قوت، برقرار ترین معاملاتی نظام اور دالر کی بین الاقوامی قبولیت امریکا کی کرنسی کو دنیا بھر میں استعمال ہونے والی کرنسی بنا دیتی ہے۔ دالر کی تاریخ قدیم ہے اور اس کا پیچیدہ نظام موجود ہے جس میں سنٹس اور پیسے شامل ہیں۔

چین اور امریکا کے درمیان تجارتی رشتے اور تعاملات بہت پرامن ہیں۔ دونوں ممالک کے درمیان ہر سال بلینڈس آف ڈالرز میں کئی بلینڈس کا کھاتہ ہوتا ہے جس کی وجہ سے کئی سو بلینڈس کے پیسے دونوں کرنسیوں کے بیچ تبادلہ ہوتے ہیں۔ امریکا چین کا سب سے بڑا تجارتی شریک ہے اور دونوں ممالک کے درمیان سفارتی اور تجارتی رشتے مضبوط ہیں۔ تجارتی روابط کے علاوہ، دونوں ممالک کے درمیان سرمایہ کاری اور مالیاتی معاہدے بھی مشترکہ ہوتے ہیں۔

چین اور امریکا کی کرنسیوں کے درمیان تبادلہ بنیادی طور پر اشتھا ریٹس پر مشتمل ہوتا ہے۔ اشتھا ریٹ یہ نسبت ہے جس کے مطابق دو کرنسیوں کے بیچ تبادلہ ہوتا ہے۔ اشتھا ریٹ کا اثر چینی یوآن اور امریکی ڈالر کے قیمتوں پر ہوتا ہے۔ اگر چینی یوآن کی قیمت اشتھا ریٹ کے مقابلے میں بڑھ جائے تو چینی یوآن کی قیمت گریز کم ہوتی ہے اور اس کے برعکس اگر چینی یوآن کی قیمت اشتھا ریٹ کے مقابلے میں گھٹ جائے تو چینی یوآن کی قیمت بڑھتی ہے۔ امریکا کے لئے بھی اسی طرح کی صورت حال ہوتی ہے۔

تعاون کی بنیاد پر چین اور امریکا کی کرنسیوں کے درمیان تبادلہ رواج میں ہوتا ہے۔ دونوں ممالک اپنے درمیانی تجارت کو تسهیل کرنے کے لئے ڈیلز اور معاہدوں پر کام کرتی ہیں۔ اس کے علاوہ، چین اور امریکا کے درمیان سرمایہ کاری، بین الاقوامی تجارت، بین الاقوامی مالیاتی معاہدے اور بین الاقوامی بینکوں کے درمیان تعاون کی بھی مثالیں پائی جاتی ہیں۔

مجموعی طور پر، چین اور امریکا کی کرنسیوں کے درمیان تعاون و تجارتی رشتے بہت اہم ہیں۔ یہ دونوں ممالک دنیا کی معاشی قوتوں کے طور پر برتری رکھتے ہیں اور ان کی کرنسیوں کا تعامل معاملاتی روابط کی بنیاد ہے۔ دونوں کے بیچ معاشی تعاون، تجارتی روابط اور سرمایہ کاری کے زیادہ فرصتوں کی تشکیل کرتا ہے۔ اس لئے چین اور امریکا دونوں کی کرنسیوں کا تعامل اقتصادی دنیا کے لئے بہت اہم ہے۔

چین کا تجارتی منڈی میں کردار

تجارت ہر ممالک کی معیشت اور ترقی کے لئے اہم عنصر ہے۔ تجارتی منڈی یعنی بین الاقوامی منڈی ہر ملک کی معیشتی ساخت کا مرکزی حصہ ہوتی ہے۔ اس منڈی میں ممالک اپنے تجارتی مصالحے کو آزماتے ہیں، مصنوعات اور خدمات کو منتقل کرتے ہیں اور معاشی روابط کو بڑھاتے ہیں۔ ایک اہم تجارتی منڈی ہے چین کی تجارتی منڈی، جو دنیا بھر میں اپنے عرصے کی بنیاد ہے۔

چین، دنیا کی دوسری سب سے بڑی معیشتی قوت ہے اور اس کا تجارتی منڈی میں اہم کردار ہے۔ چینی تجارتی منڈی، جو مشهور ہے باضابطہ نام سے ہائی لنڈ مالٹیپلیکس میں واقع ہوتی ہے، دنیا کی سب سے بڑی منڈیوں میں سے ایک ہے۔ یہاں ہر سال لاکھوں تجارتی کاروباریں منعقد ہوتی ہیں، مختلف صنعتوں کے مصنوعات اور خدمات عرضہ کئے جاتے ہیں اور ممالک کے درمیان تجارتی سودے کی بڑھتی ہوئی فہرستوں کو دیکھا جاتا ہے۔

چین کا تجارتی منڈی میں کردار بہت اہم ہے اور اس کا اثر دنیا بھر میں محسوس ہوتا ہے۔ چین کی تجارتی منڈی میں کردار کی چند اہمیتیں درج ذیل ہیں:

  1. تجارتی قدرت: چین کا تجارتی منڈی میں کردار یہ ثابت کرتا ہے کہ چین دنیا کی تجارتی قدرتوں میں سے ایک ہے۔ چینی مصنوعات اور مصنوعات دنیا بھر میں مشہور ہیں اور یہاں سے بہت سارے ممالک مصنوعات خریدتے ہیں۔ چین کا تجارتی منڈی میں کردار اس کی قوت اور استحکام کا پیش نمائندہ ہے۔
  2. تجارتی رشد: چینی تجارتی منڈی میں کردار ملک کی تجارتی رشد کا اہم حصہ ہے۔ چین کے تجارتی حجم میں سالانہ اضافے کا اہم حصہ تجارتی منڈی پر مبنی ہوتا ہے۔ چین کی تجارتی منڈی میں کردار کے تحت ممالک کے درمیان تجارتی لین دین میں اضافے کی توقع کی جاتی ہے۔
  3. تجارتی سمجھوتے: چینی تجارتی منڈی میں کردار تجارتی سمجھوتوں کی مقدار و میقات پر بھی اثر انداز کرتا ہے۔ چین مختلف ممالک کے ساتھ تجارتی سمجھوتوں پر بحث کرتا ہے اور اپنے مصالحے کی حفاظت کے لئے جدوجہد کرتا ہے۔ چین کا تجارتی منڈی میں کردار اس کی تجارتی سمجھوتوں کی طاقت کو ظاہر کرتا ہے اور دیگر ممالک پر اس کا اثر ہوتا ہے۔
  4. تجارتی تعاون: چین کا تجارتی منڈی میں کردار تجارتی تعاون کو بڑھانے میں مدد کرتا ہے۔ چین مختلف ممالک کے ساتھ تجارتی روابط کو مضبوط کرنے کیلئے منظم طور پر تجارتی منڈیوں کا استعمال کرتا ہے۔ چین کا تجارتی منڈی میں کردار تعاون کو مزید گہرا کرتا ہے اور ممالک کے درمیان تجارتی تعاون کی توقع کی جاتی ہے۔
  5. تجارتی سرمایہ کاری: چین کا تجارتی منڈی میں کردار بین الاقوامی سرمایہ کاری کو بھی متاثر کرتا ہے۔ چین میں تجارتی منڈیوں میں سرمایہ کاری کی موجودگی سے ممالک میں تجارتی سرمایہ کاری کا اضافہ ہوتا ہے۔ چین کا تجارتی منڈی میں کردار سرمایہ کاری کو بہتر بناتا ہے اور ممالک میں سرمایہ کاری کے مواقع فراہم کرتا ہے۔
  6. تجارتی سرگرمیاں: چین کا تجارتی منڈی میں کردار تجارتی سرگرمیوں کو بھی ترویج کرتا ہے۔ چینی منڈیوں میں ہر سال کئی تجارتی مصائب، میلوں اور نمائشوں کا اہتمام کیا جاتا ہے۔ ان تجارتی سرگرمیوں سے ممالک کے بیٹھکوں تک تجارتی کاروبار میں فروغ پایا جاتا ہے۔ چین کا تجارتی منڈی میں کردار تجارتی سرگرمیوں کو منظم کرتا ہے اور ممالک کو تجارتی مصائب میں شرکت کرنے کے لئے ترغیب دیتا ہے۔
  7. تجارتی نوواں کاری: چین کا تجارتی منڈی میں کردار تجارتی نوواں کاری کو بھی ترویج کرتا ہے۔ چین مختلف ممالک کو اپنی نئی تجارتی سمتوں اور انجام دیگر تجارتی مشاغل کے لئے دعوت دیتا ہے۔ چین کا تجارتی منڈی میں کردار تجارتی نوواں کاری کو تشجیع کرتا ہے اور ممالک کو اپنی تجارتی سرگرمیوں میں مزید توسیع کرنے کی توقع کرتا ہے۔

اختتامی باتیں: چین کا تجارتی منڈی میں کردار دنیا بھر میں محسوس ہوتا ہے۔ یہاں ہر سال لاکھوں تجارتی کاروباریں اور سمجھوتے منعقد ہوتے ہیں اور ممالک کے درمیان تجارتی سودے کی فہرستوں کو دیکھا جاتا ہے۔ چین کا تجارتی منڈی میں کردار ممالک کے تجارتی تعاون، سرمایہ کاری، سرگرمیاں اور نوواں کاری کو بڑھاتا ہے۔ چین کی تجارتی منڈی کا اہمیتی حصہ بننا ہر ممالک کے لئے ضروری ہے اور اس سے بہتر تجارتی روابط اور معاشی تعاون کے مواقع پیدا ہوتے ہیں۔

امریکا کا تجارتی منڈی میں کردار

امریکا، جنوبی اور شمالی امریکہ میں واقع ایک بہت بڑی ملت ہے۔ یہ ایک اقتصادی قوت ہے جس کی تجارتی منڈی دنیا بھر میں شہرت یافتہ ہے۔ امریکا کے تجارتی منڈیوں کا کردار بہت اہم ہے اور ان کا اثر دنیا بھر میں محسوس ہوتا ہے۔ یہاں پر ہزاروں تجارتی کاروبار ہر سال منعقد ہوتے ہیں اور ممالک کے درمیان تجارتی روابط کو مزید مضبوط کرتے ہیں۔ امریکا کے تجارتی منڈیوں کا کردار متعدد حوالوں سے مشتمل ہوتا ہے۔ اس مضمون میں ہم امریکا کے تجارتی منڈی میں کردار پر غور کریں گے۔

امریکا کا تجارتی منڈی میں کردار عدد و شمار سے زیادہ سمجھا جا سکتا ہے۔ یہاں تجارتی کاروبار کے لئے مختلف منظومے، سرمایہ کاری کے ذرائع اور سوداگری کے مواقع فراہم کیے جاتے ہیں۔ امریکا کے تجارتی منڈیوں میں برآمدی اور درآمدی مصنوعات، خدمات، سرمایہ کاری، اشیاء طبیعیہ اور دیگر مصنوعات کی تجارت کی جاتی ہے۔ امریکا کی منڈیوں میں مختلف صنعتی قطاعات، مالیاتی بورڈز، بینکوں، بیمہ کمپنیوں اور دیگر تجارتی اداروں کی موجودگی بھی ہوتی ہے جو تجارتی کاروبار کو مزید تسهیلات فراہم کرتی ہیں۔

امریکا کی تجارتی منڈیوں میں کردار میں سب سے اہم عنصر امریکی اقتصاد کی قوت ہے۔ امریکا ایک اقتصادی قوت کے طور پر مانا جاتا ہے جس کی تجارتی منڈیوں کا کردار اقتصادی توانائی کو بڑھاتا ہے۔ امریکی کمپنیوں کی قدرتی اور صنعتی سازشوں کی وجہ سے امریکا کے تجارتی منڈیوں میں مصنوعات کی تجارت بہت اہم ہوتی ہے۔ امریکا کے تجارتی کاروباروں کی بزنس اور مارکیٹنگ استریٹیجیز، پیشہ ورانہ کارکنان کی تعلیم و تربیت، تکنالوجی کا استعمال اور انقلابی ترقی کی حوصلہ افزائی بھی ایک بہت اہم کردار ادا کرتی ہیں۔

امریکا کا تجارتی منڈی میں کردار عالمی تجارتی رقابت میں بھی بہت اہم ہے۔ امریکا کی منڈیوں میں منافسہ آرائی، جدید ترین تکنالوجی کا استعمال، قوانین و ضوابط کا پاس ہونا، انفرادی کارکنان کی تیز رفتاری اور منصوبوں کی مستقل تجدید کاری امریکا کو عالمی منڈیوں میں رہبری کا دار بناتی ہیں۔ امریکہ کی منڈیوں میں ٹیکسٹائل، مشینری، الیکٹرانکس، خوراک اور معدنیات کی تجارتی سامان کے علاوہ معلوماتی تکنالوجی، برقیاتی سامان، پھارماسوٹیکلز، طبی تجارتی سامان اور دیگر تجارتی سرمایہ کاریوں کا بھی بڑا حصہ ہوتا ہے۔

امریکا کے تجارتی منڈیوں کا کردار متعدد ممالک کے ساتھ بین الاقوامی تجارتی رابطے بھی بناتا ہے۔ امریکا دنیا کی تجارتی دھرتی پر بھرپور میں رکھنے کی کوشش کرتا ہے اور دوستان کے ساتھ تجارتی تعلقات کو مزید مستحکم کرتا ہے۔ امریکا اپنی تجارتی منڈیوں میں بین الاقوامی تجارت کو بڑھانے کیلئے ترقی پسندانہ سیاستیں اختیار کرتا ہے۔ امریکا کے تجارتی منڈیوں میں بین الاقوامی معاہدے، تجارتی امن، قوانین و ضوابط کا تعاون اور اخذ کردار بہت اہم ہیں۔

امریکا کا تجارتی منڈی میں کردار خرید و فروخت کی سرعت و آسانی کو بھی مستحکم کرتا ہے۔ امریکا کے تجارتی کاروباروں میں استعمال ہونے والی نئی تکنالوجیوں نے تجارت کو آسان بنا دیا ہے۔ آن لائن خرید و فروخت کے پلیٹ فارمز، موبائل ایپلیکیشنز اور ایکسپورٹ امپورٹ پراکسیمیٹی کے ذریعے امریکی کاروباریوں نے دنیا بھر میں اپنی حاضری کو مضبوط کیا ہے۔ امریکا کے تجارتی منڈیوں میں کاروباری آپشنز، سٹاکس اور فیچرز کی تجارت بھی بہت رواج میں ہے جو کاروباریوں کو تجارتی مراعات پیش کرتی ہیں۔

امریکہ کے تجارتی منڈیوں کا کردار تجارتی نوابی کو بھی مزید بڑھاتا ہے۔ امریکا کے بین الاقوامی منصوبوں میں عمده حصہ تجارت پر مبنی ہوتا ہے اور امریکا اپنے علاقائی ساتھیوں کو تجارتی مراعات دیتا ہے۔ امریکا کے تجارتی منڈیوں میں مفت تجارتی سمجھوتے، تعریفی امتیازات، تجارتی بڑائیوں اور تعاونی مشروعات کی بڑھتی تعداد کاروباریوں کو ترغیب دیتی ہیں۔

امریکا کا تجارتی منڈی میں کردار اقتصادی توانائی، تجارتی قوانین و ضوابط، تکنالوجی کی استعمال، بین الاقوامی تعاون اور کاروباری مراعات کے ذریعے مستحکم ہوتا ہے۔ امریکا کے تجارتی منڈیوں میں تجارتی کاروباروں کی توانائی، قدرتی منصوبوں کی ترقی، انفرادی کارکنان کی مہارت اور ایجاد کی تکنالوجی کے اثرات کو دنیا بھر میں محسوس کیا جاتا ہے۔ امریکا کے تجارتی منڈیوں کا کردار عالمی منظومے میں قابل ذکر ہے اور اس کا تاثر دنیا بھر میں محسوس ہوتا ہے۔

مجموعی طور پر، امریکا کا تجارتی منڈی میں کردار بہت اہم ہے۔ یہاں تجارتی کاروبار کو تسهیلات فراہم کی جاتی ہیں، اقتصادی توانائی کو بڑھاتی ہیں، عالمی تجارتی رقابت میں امریکا کو برآمد کرتی ہیں، خرید و فروخت کی سرعت و آسانی کو مضبوط کرتی ہیں اور تجارتی رابطوں کو مستحکم کرتی ہیں۔ امریکا کے تجارتی منڈیوں کا کردار اقتصادی ترقی اور منظم دنیا کی تجارتی دھرتی کے لئے بہت اہم ہے۔

امریکا اور چین کا ایشیاء میں کردار

امریکا اور چین، دو بڑے قوتوں کے طور پر، ایشیاء میں اہم کردار ادا کرتے ہیں۔ ان دونوں ممالک کی تاریخ، سیاسی تعلقات، اقتصادی رشد اور فہرست طویل معاہدوں کی وجہ سے ان کا اثر ایشیاء میں کامیابی اور توسیع کے علاوہ راستہ بنائی گئی ہے۔

امریکہ، جنوبی ایشیاء کی حاکم قوت کے طور پر دنیا میں مشہور ہے۔ امریکہ کی فوریئن پالیسی کا حصہ بننے کے لئے، یہاں کے کسی بھی ممالک کے ساتھ استحکامی روابط قائم کرنے کی ضرورت ہوتی ہے۔ امریکہ کی ایشیاء پالیسی کے تحت، وہ علاقوں میں موجود دشمنان کے خلاف اپنے مصالحتی منافع کی حفاظت کرتا ہے اور اپنے تجارتی مفادات کو توسیع کرتا ہے۔ امریکہ کی ایشیاء میں قیادتی کیپیٹل واشنگٹن ڈی سی سے آرامدہ قومی منصوبوں کا حصہ بنتی ہے۔

دوسری طرف چین، مشرقی ایشیاء کی بڑی قوت کے طور پر مشہور ہے۔ چین کی عظیم آبادی، بڑی اقتصادی قوت، تجارتی تعاملات اور پاک چین اقتصادی راہداری کی وجہ سے، یہ علاقے میں برتری حاصل کر رہا ہے۔ چین ایشیاء میں بڑی سرمایہ کاری پر مشتمل ہے اور اس کی سیاسی اور اقتصادی راہداری کی وجہ سے ایشیاء میں بڑے تجارتی اور سیاسی اثر کی حامل ہوا ہے۔ چین کی پروجیکٹ چائنا اینڈ روڈ اور بلٹ ایک نئی سلسلہ وار تجارتی راہیں تعمیر کر رہی ہیں جو ایشیاء کے ساتھ تجارتی اور اقتصادی تعاملات کو بڑھانے میں مددگار ثابت ہو رہی ہیں۔

امریکا اور چین کا ایشیاء میں کردار کسی بھی علاقے کے ترقی میں اہم ہے۔ دونوں ممالک کے مابین اقتصادی تعاملات، سیاسی رابطے اور دیپلومیسی کا سطح بہت بلند ہے۔ ان کے درمیان تجارتی رقابت بڑھتا ہی جا رہا ہے جبکہ سیاسی مسائل میں بھی دونوں ممالک کے مابین تنشات موجود ہیں۔ امریکہ اور چین کے درمیان اقتصادی جنگ بھی دوروں کے تجارتی منافعوں کو متاثر کرتی ہے۔ امریکہ نے چین کے خلاف تعریفیں لگائی ہیں جبکہ چین نے امریکہ کو تجارتی رکاوٹیں بنا کر جواب دیا ہے۔ اس طرح، امریکا اور چین کے درمیان تنازعات موجود ہیں جو کہ ایشیاء کی سیاسی، اقتصادی اور تجارتی منظومہ کو متاثر کرتے ہیں۔

خلاصے کے طور پر، امریکا اور چین دونوں ایشیاء میں اہم کردار ادا کرتے ہیں۔ امریکا کو جنوبی ایشیاء کی حاکم قوت کے طور پر تسلیم کیا جاتا ہے جبکہ چین مشرقی ایشیاء کی بڑی قوت ہے۔ دونوں ممالک کے درمیان سیاسی، اقتصادی، تجارتی اور دیپلومیسی تعاملات ہیں۔ امریکا کی ایشیاء پالیسی کا مقصد اپنے مصالحتی منافع کی حفاظت اور تجارتی مفادات کی توسیع ہے جبکہ چین کا مقصد ایشیاء میں توسیعی پالیسی کی تعمیر ہے جو پروجیکٹ چائنا اینڈ روڈ اور بلٹ کے ذریعے تکمیل پذیر ہو رہی ہے۔ امریکا اور چین کے درمیان تجارتی رقابت، سیاسی تنازعات اور اقتصادی جنگ بھی موجود ہیں جو ایشیاء کی سیاسی، اقتصادی اور تجارتی منظومے کو متاثر کرتے ہیں۔ ایشیاء کی ترقی اور استحکام کے لئے، امریکا اور چین کو تعاون کرنا ضروری ہے تاکہ ان ممالک کے درمیان تنازعات کے بجائے ایشیاء میں استحکام و ترقی کا راستہ بنایا جا سکے۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here